https://www.rayznewstv.com/

Share the Love


اسلام آباد: الیکٹرانک ووٹنگ اور بیرون ملک مقیم پاکستانیوں کو حق رائے دہی دینے کا آرڈیننس چیلنج کردیا گیا۔

لیگی ایم این اے محسن شاہنواز رانجھا نے صدارتی آرڈیننس اسلام آباد ہائیکورٹ میں چیلنج کرتے ہوئے استدعا کی کہ ای ووٹنگ اور بیرون ملک مقیم پاکستانیوں کو آرڈیننس کے ذریعے ووٹ دینے کا حق غیر آئینی و غیر قانونی قرار دیا جائے اور اس سے متعلق آرڈیننس کالعدم قرار دیا جائے۔


 
درخواست میں صدر پاکستان اور وزیراعظم کو پرنسپل سیکرٹری کے ذریعے فریق بنایاگیا  جبکہ سیکرٹری الیکشن کمیشن اور سیکرٹری قانون و انصاف بھی فریقین میں شامل ہیں۔
درخواست گزار نے کہا کہ میڈیا رپورٹس کے مطابق 9 مئی کو حکومت نے ایک صفحاتی آرڈیننس جاری کیا، اس اہم نوعیت کی قانون سازی سے متعلق عوام یا عوامی نمائندوں کو اعتماد میں نہیں لیا گیا، 24 ستمبر 2018 سے اب تک حکومت 54 سے زائد صدارتی آرڈیننس جاری کرچکی ہے، اور آرڈیننس جاری کرنا معمول بنا لیا ہے، جس سے عوامی نمائندوں کو قانون سازی کے حق سے محروم رکھا جاتا ہے۔

درخواست گزار نے کہا کہ آرڈیننس جاری کرنے کا صدر کا اختیار ہنگامی صورت کے لیے ہے، جس کے بغیر صدارتی آرڈیننس جاری کرنا پارلیمنٹ کو بے توقیر کرنے کے مترادف ہے، پی ایم ڈی سی کیس میں اسلام آباد ہائیکورٹ واضح کرچکی ہے کہ کن حالات میں صدارتی آرڈیننس جاری ہوسکتا ہے۔

 

ISLAMABAD: The Electronic Voting and Voting Ordinance for Pakistanis Abroad has been challenged.

League MNA Mohsin Shahnawaz Ranjha challenged the Presidential Ordinance in the Islamabad High Court and sought that the right of e-voting and Pakistanis abroad to vote through the ordinance be declared unconstitutional and illegal and the related ordinance be declared null and void. To be given

 
In the petition, the President of Pakistan and the Prime Minister have been made parties through the Principal Secretary, while the Secretary Election Commission and the Secretary Law and Justice are also among the parties.
The petitioner said that according to media reports, the government issued a one-page ordinance on May 9, the public or public representatives were not taken into confidence regarding this important type of legislation, the government has more than 54 presidential since September 24, 2018. Ordinances have been issued, and the issuance of ordinances has become routine, depriving public representatives of the right to legislate.

The petitioner said that the President's power to issue ordinances is for emergency, without which issuing a presidential ordinance would be tantamount to disrespecting Parliament. In the PMDC case, the Islamabad High Court has clarified the circumstances under which. A presidential ordinance may be issued.

Share the Love


Source
You Might Also Like
Comments By User
Add Your Comment
Your comment must be minimum 30 and maximum 200 charachters.
Your comment must be held for moderation.
If you are adding link in comment, Kindly add below link into your Blog/Website and add Verification Link. Else link will be removed from comment.