https://www.rayznewstv.com/

Share the Love


ملبورن، آسٹریلیا: اگرچہ یہ کچھ عجیب خبر ہے لیکن لاکھوں لوگوں پر کئے گئے سروے سے معلوم ہوا ہے کہ دودھ کا باقاعدہ استعمال مضر کولیسٹرول کو کم کرتا ہے اور دل کے امراض کا خدشہ کم ہوجاتا ہے۔

اس نئی تحقیق میں 20 لاکھ افراد کو شامل کیا گیا ہے۔ اگرچہ دودھ پینے والوں کے جسم میں چکنائی زیادہ ہوتی ہے لیکن مضر کولیسٹرول کی سطح کم رہتی ہے اور لامحالہ امراضِ قلب کا خطرہ کم کم ہوجاتا ہے۔ لیکن اس کی مکمل سائنسی وجہ سامنے نہیں آسکی کیونکہ ہم دودھ کو قدرے مختلف انداز میں ہضم کرتے ہیں۔

24 مئی کو انٹرنیشنل جرنل آف اوبیسٹی میں شائع ایک طویل تحقیق کے مطابق یونیورسٹی آف ریڈنگ، یونیورسٹی آف ساؤتھ آسٹریلیا اوریونیورسٹی آف آکلینڈ کے سائنسدانوں نے برطانیہ میں لگ بھگ 20 لاکھ افراد کا ڈیٹا دیکھا ہے۔ اس میں جینیاتی سطح پردودھ پینے والے افراد کا جائزہ لیا گیا ہے۔ انہوں نے دیکھا ہے کہ ایک جینیاتی تبدیلی کی وجہ سے وہ لیکٹوز ہضم کرلیتے ہیں اور اسی بنا پر ان میں دودھ پینے کی عادت پیدا ہوجاتی ہے۔
اگرچہ دودھ پینے کی عادت باڈی ماس انڈیکس (بی ایم آئی) میں اضافے کی وجہ بنتی ہے لیکن اس سے اچھے اور برے دونوں قسم کے کولیسٹرول کم ہوتے ہیں۔ مجموعی طورپردودھ پینے سے امراضِ قلب میں 14 فیصد تک کمی ہوتی ہے۔ دلچسپ بات یہ ہے کہ دودھ سیرشدہ چکنائی والی غذا ہونے کے باوجود بھی یہ دل کی بیماریوں کی وجہ نہیں بنتا۔ یعنی یہ سرخ گوشت جیسا خطرناک ہرگز نہیں ہے۔

ماہرین کہتے ہیں کہ شاید دودھ میں کوئی ان دیکھا کیمیائی مرکب ہے جو دل کو تندرست رکھنے میں مدد دیتا ہے۔ دوسری جانب یہ رگوں اور شریانوں کی تنگی کو بھی دور کرتا ہے۔

Melbourne, Australia: Although this is strange news, a survey of millions of people has found that regular consumption of milk lowers harmful cholesterol and reduces the risk of heart disease.

The new study covers 2 million people. Although milk drinkers are high in body fat, the levels of harmful cholesterol remain low and the risk of heart disease is inevitably reduced. But the full scientific reason for this has not been revealed because we digest milk in a slightly different way.

According to a lengthy study published in the International Journal of Obesity on May 24, scientists at the University of Reading, the University of South Australia and the University of Auckland have looked at data on about 2 million people in the UK. It looks at the genetic level of people who drink milk. They have observed that due to a genetic mutation, they digest lactose and as a result, they develop the habit of drinking milk.
Although the habit of drinking milk causes an increase in body mass index (BMI), it also lowers both good and bad cholesterol. Overall, drinking milk reduces the risk of heart disease by up to 14%. Interestingly, even though milk is a high-fat diet, it does not cause heart disease. That is, it is not as dangerous as red meat.

Experts say that milk may contain an unseen chemical compound that helps keep the heart healthy. On the other hand, it also relieves the narrowing of veins and arteries.

Share the Love


Source
You Might Also Like
Comments By User
Add Your Comment
Your comment must be minimum 30 and maximum 200 charachters.
Your comment must be held for moderation.
If you are adding link in comment, Kindly add below link into your Blog/Website and add Verification Link. Else link will be removed from comment.