https://www.rayznewstv.com/

Share the Love


اسلام آباد: پاکستان تحریک انصاف کی حکومت کے چوتھے وزیر خزانہ شوکت ترین گیارہ جون کو اپنا پہلا بجٹ پارلیمنٹ میں پیش کریں گے۔

تنخواہوں میں اضافہ

آئندہ مالی سال کے بجٹ کا کل حجم 8000 ارب روپےکےلگ بھگ ہوگا،ملازمین کی تنخواہوں میں دس سے پندرہ فیصد اضافہ متوقع ہے، معیشت کا حجم 52 ہزار 57 ارب روپے تک پہنچے گا۔ معاشی ترقی کی شرح 4.8 فی صد ہوگی، 3060 ارب روپے قرضوں اور سود پر خرچ ہوں گے، متعدد شعبوں کیلئے ٹیکس چھوٹ ختم کیے جانے کا امکان ہے۔
ٹیکس چھوٹ ختم

آئندہ بجٹ میں 20 ارب روپے سے زائد کی انکم ٹیکس چھوٹ ختم کیے جانے کا امکان ہے۔ تنخواہ دار طبقے کے میڈیکل الاؤنس پر، کارپوریٹ ایگریکلچرل انکم کے منافع پر اور قبائلی علاقہ جات میں کاروبار پر 4 ارب روپے کی انکم ٹیکس چھوٹ ختم کرنے کی تجاویز ہیں۔

بجٹ خسارہ

ذرائع ایف بی آر کے مطابق سوشل سیکیورٹی اداروں کیلئے انکم ٹیکس، ایل این جی ٹرمینلزاورآپریٹرز کو دی گئی انکم ٹیکس چھوٹ ختم کرنےکی سفارش ہے جبکہ آئندہ مالی سال بجٹ خسارہ 5.6 فیصد کے حساب سے 2915 ارب روپے ہوسکتا ہے۔

دفاعی بجٹ 1400 ارب روپے

سالانہ ترقیاتی پروگرام900ارب روپےرکھاجائےگا۔ صوبوں کا ترقیاتی بجٹ  1000 ارب روپے ہوگا، سبسڈیزکی مد میں 530 ارب روپےرکھےجاسکتےہیں۔ دفاعی بجٹ 1400ارب سے زائد رکھے جانےکا امکان ہے۔

آمدن

آئندہ بجٹ میں ٹیکس آمدن  5820 ارب روپے اور نان ٹیکس آمدن  1420 ارب روپے ہوسکتی ہے۔ تعمیراتی شعبے کیلئے ایمنسٹی کی مدت میں توسیع کا امکان ہے۔ آئی ایم ایف کی رضا مندی پر کنسٹرکشن ایمنسٹی اسکیم کی مدت ستمبر یا دسمبر 2021 تک بڑھنے کا امکان ہے۔ آرڈیننس کے تحت مدت میں 3 یا 6 ماہ کی توسیع ہو سکتی ہے۔ تعمیراتی شعبے کیلئے دی گئی اسکیم کے تحت 140 ارب کے 350 منصوبے رجسٹرڈ ہوئے اور اس اسکیم کی ڈیڈ لائن جون 2021 ہے۔

 

ISLAMABAD: Pakistan Tehreek-e-Insaf (PTI) fourth finance minister Shaukat Tareen will present his first budget in Parliament on June 11.

Increase in salaries

The total volume of the budget for the next financial year will be around Rs 8000 billion, the salaries of the employees are expected to increase by ten to fifteen percent, the volume of the economy will reach Rs 52,057 billion. The economic growth rate will be 4.8%, Rs 3,060 billion will be spent on loans and interest, tax exemptions are likely to be abolished for various sectors.
Tax exemption expired

Income tax exemptions of more than Rs. There are proposals to abolish income tax rebates of Rs 4 billion on salaried class medical allowances, corporate agricultural income profits and businesses in the tribal areas.

Budget deficit

According to FBR sources, it is recommended to abolish income tax exemption for social security institutions, LNG terminals and operators, while the budget deficit for the next financial year could be Rs 2915 billion at 5.6 per cent.

Defense budget Rs. 1400 billion

Annual development program will be set at Rs. 900 billion. The development budget of the provinces will be Rs.1000 billion, Rs.530 billion can be set aside for subsidies. The defense budget is likely to be more than Rs 1,400 billion.

income

In the next budget, tax revenue could be Rs 5820 billion and non-tax revenue Rs 1420 billion. Amnesty for the construction sector is likely to be extended. With the consent of the IMF, the construction amnesty scheme is likely to be extended to September or December 2021. Under the ordinance, the period can be extended by 3 or 6 months. 350 projects worth Rs 140 billion were registered under the scheme for the construction sector and the deadline for this scheme is June 2021.

Share the Love


Source
You Might Also Like
Comments By User
Add Your Comment
Your comment must be minimum 30 and maximum 200 charachters.
Your comment must be held for moderation.
If you are adding link in comment, Kindly add below link into your Blog/Website and add Verification Link. Else link will be removed from comment.