https://www.rayznewstv.com/

Share the Love


کراچی: ایم کیو ایم کی جانب سے شہر کے مختلف علاقوں میں سندھ حکومت کے خلاف رکشوں اور گاڑیوں پر بینرز آویزاں کردئیے گئے۔

ایکسپریس نیوز کے مطابق کراچی سمیت شہری سندھ کے ساتھ زیادتیوں پر ایم کیو ایم پاکستان نے احتجاجی تحریک کے لیے حکمت عملی مرتب کرلی ہے، جس کے تحت  پہلے مرحلے میں کراچی سمیت اندرون سندھ زیادتیوں کے خلاف احتجاجی بینرز اور آگاہی مہم چلائی جائے گی۔


ایم کیو ایم کی جانب سے آج سے احتجاجی تحریک کا باضابطہ آغاز کردیا گیا ہے،اور پہلے مرحلے میں ایم کیو ایم کی جانب سے سندھ حکومت کے فیصلوں اور زیادتیوں کے خلاف کراچی کے مختلف علاقوں کے چوکوں اور چوراہوں پر احتجاجی بینرز آویزاں کردیئے گئے ہیں، جب کہ رکشوں، ٹیکسیوں اور مسافر گاڑیوں پر بھی بینرز آویزاں کئے گئے ہیں۔

ایم کیو ایم کے احتجاجی بینرز میں کراچی کے وسائل پر قبضہ ، کراچی پر ڈاکو راج نامنظور کے نعرے درج کئے گئے ہیں، اور جعلی ڈومیسائل پر بھرتیاں، کرپٹ اور غیر مقامی پولیس کی بے دخلی اور کراچی کو اس کے حصے کا پانی دینے کا مطالبہ کیا گیا ہے۔ ذرائع کا کہنا ہے کہ احتجاج کے دوسرے حصے میں ریلیاں، مظاہرے اور وزیراعلی ہاؤس کا گھیراؤ بھی شامل ہے۔

 

Karachi: MQM has put up banners on rickshaws and vehicles against the Sindh government in different areas of the city.

According to Express News, MQM Pakistan has formulated a strategy for a protest movement against the abuses against the citizens of Sindh, including Karachi, under which in the first phase, protest banners and awareness campaign will be launched against abuses in Sindh including Karachi.

 

The MQM has formally launched a protest movement from today, and in the first phase, protest banners have been hung on the squares and intersections of different areas of Karachi against the decisions and excesses of the Sindh government. Banners have also been hung on rickshaws, taxis and passenger vehicles.

MQM's protest banners include slogans calling for seizure of Karachi's resources, disapproval of dacoit rule in Karachi, recruitment on fake domiciles, eviction of corrupt and non-local police and demand that Karachi be given its share of water. Has been Sources said that the second part of the protest included rallies, demonstrations and siege of the Chief Minister's House.

Share the Love


Source
You Might Also Like
Comments By User
Add Your Comment
Your comment must be minimum 30 and maximum 200 charachters.
Your comment must be held for moderation.
If you are adding link in comment, Kindly add below link into your Blog/Website and add Verification Link. Else link will be removed from comment.