https://www.rayznewstv.com/

Share the Love


لاہور: چیئرمین نیب جسٹس (ر) جاوید اقبال کا کہنا ہے کہ نیب آرڈیننس میں ترمیم کا شوق پورا کرنے سے پہلے اسفندیار ولی کیس کا فیصلہ پڑھ لیں.

لاہور میں تقریب سے خطاب کے دوران جاوید اقبال نے کہا کہ نیب اور کرپشن ساتھ ساتھ نہیں چل سکتے، نیب بڑے لوگوں کی خدمت کے لئے نہیں، عوام کے لئے وجود میں آیا، نیب مسئلہ نہیں مسائل کا حل ہے،نیب پر تنقید سے ہمیں سیکھنے کا موقع ملے گا، تنقید کے بھی اصول ہوتے ہیں، ہر چیز کے 2 پہلو ہوتے ہیں، روشن پہلوؤں کی بات نہیں کرسکتے تو تاریک پہلوں کو اجاگر کرکے قوم کو مایوس نہ کریں، نیب کوشاباش نہ دیں تاریک پہلو کی بات بھی نہ کریں، رب تعالیٰ جس کو عزت دینا چاہے تو کسی کے چند بیانات اس عزت کو ذلت میں بدل نہیں سکتے۔

جسٹس ریٹائرڈ جاوید اقبال نے کہا کہ کچھ عرصہ قبل یہ کہا گیا کہ کاروباری طبقہ نیب سے مطمئن نہیں، نیب کی وجہ سے کچھ اہم ترین فیصلے نہیں ہوپا رہے، اس کے لئے ایک آرڈیننس لایا گیا۔ 4 مہینے بعد وہ آرڈیننس واپس ہوگیا۔ بتایا جائے کہ نیب کی وجہ سے کون سے معرکۃ الارا فیصلے نہیں ہوپارہے تھے۔ اگر ایسا ہے تو ان میں سے کون سے فیصلے کئے گئے، پارلیمنٹ کا احترام کرتے ہیں لیکن تنقید کرنے والے اسفندیار ولی کے کیس کا فیصلہ بھی پڑھ لیں۔ نیب آرڈیننس میں ترمیم کا شوق پورا کرنے سے پہلے اسفندیار ولی کیس کا فیصلہ پڑھ لیں۔
چیئرمین نیب نے کہا کہ سرمایہ کاری کی راہ میں نیب کسی بھی صورت رکاوٹ نہیں، نیب لوگوں کے لئے تحفظ کی آماج گاہ ہے، نیب کی وجہ سے ملک کی برآمدات بڑھ رہی ہیں، آج ملک میں سرمایہ کاری بڑھ رہی ہے، نیب کے کئی مسائل پس پردہ رہ کر حل کئے، پاکستان میں مشکل ترین کام کسی سے پیسہ واپس لینا ہے، کہا گیا کہ نیب چھوٹی مچھلیوں کو پکڑتا ہے، چھوٹی مچھلیاں جال سے نکل جاتی ہیں ، ہم نے شارک اور مگرمچھوں کو پکڑا ہے، ملک کی تاریخ میں پہلی بار 3 سال میں 533 ارب روپے کی وصولیاں ہوئی ہیں۔

جاوید اقبال نے کہا کہ حقیقی بزنس مین اور ڈکیت میں فرق کرنا ہوگا، بزنس مین لوگوں کو ناامید نہیں دلاتے، لوگوں کے گھر کے دیئے نہیں بجھاتے، 3ماہ میں کسی بھی کاروباری شخصیت کی شکایت نہیں آئی ، اس وقت1300ریفرنسز مختلف عدالتوں میں ہیں ان میں دو فیصد بھی بزنس مین کے کیسز نہیں۔ عام آدمی کی بربادی کی وجہ ہی کرپشن ہے، پاکستان میں ایسے لوگ موجود ہیں جو موٹرسائیکل پر تھے آج جہاز خرید لیے، کچھ لوگ 35 سال اقتدار میں رہے ہیں کچھ کو 35 ماہ بھی نہیں ہوئے۔

چیئرمین نیب نے کہا کہ نیب نے ہر قدم ملک و قوم کی بہتری کے لئے اٹھایا، نیب پہلے بھی موجود تھا اور آج بھی موجود ہے، نیب آئندہ بھی اپنا کام کرتا رہے گا۔ صبح پیشی بھگتنے والا شام کوخطاب میں نیب پر تنقید شروع کردیتا ہے، تنقید کرنے والوں کو حقائق کا ادراک ہونا چاہیے، نیب قوانین کو سپریم کورٹ دیکھ چکی ہے، کیا چند لوگ سپریم کورٹ سے زیادہ ذہین ہیں؟۔

 

LAHORE: Chairman NAB Justice (retd) Javed Iqbal has said that before fulfilling the interest of amending the NAB Ordinance, one should read the verdict of Asfandyar Wali case.

Addressing a function in Lahore, Javed Iqbal said that NAB and corruption could not go hand in hand. There will be an opportunity to learn, there are also principles of criticism, there are 2 aspects of everything, if you can't talk about the bright aspects, don't disappoint the nation by highlighting the dark aspects, don't praise the NAB, don't even talk about the dark aspect. If the Almighty wants to honor someone, then a few statements of someone cannot turn that honor into humiliation.

Justice (retd) Javed Iqbal said that some time ago it was said that the business community was not satisfied with the NAB and some important decisions were not being taken due to the NAB. An ordinance was brought for this. The ordinance was returned 4 months later. It should be mentioned which controversial decisions could not be taken due to NAB. If so, which of these decisions were made, respect the parliament, but also read the decision in the case of critics Asfandyar Wali. Before fulfilling the desire to amend the NAB Ordinance, read the decision of the Asfandyar Wali case.
Chairman NAB said that NAB is not an obstacle in the way of investment, NAB is a safe haven for the people, due to NAB the country's exports are increasing, today investment in the country is increasing, many NAB Problems solved behind the scenes, the most difficult task in Pakistan is to get money back from someone, it was said that NAB catches small fish, small fish get out of the net, we have caught sharks and crocodiles, the history of the country For the first time in 3 years, I have received Rs. 533 billion.

Javed Iqbal said that there is a difference between a real businessman and a robber. Businessmen do not disappoint people, they do not pay people's dues, no complaint of any businessman has come in 3 months, at present there are 1300 references in different courts. Not even 2% of cases are of businessmen. Corruption is the reason for the ruin of the common man. There are people in Pakistan who were on motorcycles and bought planes today. Some people have been in power for 35 years. Some have not even been in power for 35 months.

Chairman NAB said that NAB has taken every step for the betterment of the country and the nation, NAB was present before and still exists today, NAB will continue to do its job. The one who appears in the morning starts criticizing the NAB in his evening address. The critics should be aware of the facts. The Supreme Court has seen the NAB rules. Are some people more intelligent than the Supreme Court?

Share the Love


Source
You Might Also Like
Comments By User
Add Your Comment
Your comment must be minimum 30 and maximum 200 charachters.
Your comment must be held for moderation.
If you are adding link in comment, Kindly add below link into your Blog/Website and add Verification Link. Else link will be removed from comment.