https://www.rayznewstv.com/

Share the Love


فن لینڈ: انسان کی سننے کی صلاحیت بڑی محدود ہے یعنی ہم 20 سے 20 ہزار ہرٹز کے درمیان کے صوتی امواج سے پیدا ہونے والی آوازیں ہی سن سکتے ہیں۔ لیکن اب فن لینڈ کی آلٹو یونیورسٹی کے سائنسدانوں نے ایک ٹیکنالوجی وضع کی ہے جس کی بدولت ہم انسان بھی الٹراساؤنڈ سن سکیں گے اور ان میں سرِفہرست چمگادڑوں کی آوازیں شامل ہیں۔

اس تحقیق کے نتائج سائنٹفک رپورٹس کی 2 جون 2021 کی اشاعت میں شائع کئے گئے ہیں۔ ہم جانتے ہیں کہ چمگادڑوں کی نظر بہت کمزور ہوتی ہیں اور وہ الٹراساؤنڈ خارج کرکے، اجسام سے ٹکرا کر پلٹنے یعنی بازگشت (ایکو) کی مدد سے اپنا سفر جاری رکھتی ہیں۔ لیکن ہم انسان ان آوازوں کو نہیں سن سکتے تھے لیکن سائنس اور جدید ٹیکنالوجی نے یہ ممکن کردکھایا ہے۔

آلٹو یونیورسٹی کے پروفیسر ویلی پوکی کہتے ہیں کہ ہماری نئی تکنیک سےہم یہ معلوم کرسکتے ہیں کہ کس طرف سے ان جانوروں کی صدا آرہی ہے یعنی ہم الٹراساؤنڈ خارج ہونے کے مقام کا درست اندازہ لگاسکتےہیں۔ اس طرح انسان ’فوق سماعت‘ یعنی سپرہیئرنگ کا حامل بن سکتا ہے۔
اس سے قبل چمگادڑوں کی صدا سننے یا سمت معلوم کرنے کے کئی آلات بنائے جاتے رہے ہیں لیکن ان میں کامیابی نہ مل سکی۔ اس ضن میں ماہرین نے لالی پاپ نما گول شے پر حساس مائیکروفون کی ایک قطار بنائی۔ اب جو الٹراساؤنڈ آواز موصول ہوئی اسے سماعت کے قابل فری کوئنسیوں میں فوری طور پر تبدیل کردیا گیا۔ اور اس آواز کو عین اسی لمحے ہیڈفون کی طرف بھیجا گیا۔ فی الحال پچ شفٹنگ یا آواز کی فری کوئنسی بدلنے کا کام کمپیوٹر نے کیا ہے لیکن اگلے مرتبہ شاید یہ پورا نظام ہیڈفون میں ہی سمودیا جائے گا۔

اس کے بعد مائیکروفون نے تمام باتوں کا جائزہ لیا اور سب سے اہم سمت کی نشاندہی کی جہاں سے آواز آرہی تھی۔ اس طرح نہ صرف اڑتے ممالئے کی الٹراساؤنڈ آوازکو سنا گیا بلکہ اس کی سمت بھی معلوم ہوگئی۔ لیکن اس ایجاد کے بہت سے فوائد ہیں۔ اس کی بدولت پائپوں کے رساؤ اور بجلی کے نظام میں گڑبڑ کا پتا لگایا جاسکتا ہے جو عموماً الٹراساؤنڈ کی صورت میں خارج ہوتے ہیں۔

 

Finland: Human hearing is very limited, meaning we can only hear sounds made by sound waves between 20,000 and 20,000 Hz. But now scientists at Alto University in Finland have developed a technology that will allow humans to hear ultrasound, including the sounds of the top bats.

The findings are published in the June 2, 2021 issue of Scientific Reports. We know that bats have very weak eyesight and they continue their journey by emitting ultrasound, colliding with objects and turning around. But we humans could not hear these voices, but science and modern technology have made it possible.

"With our new technique, we can find out from which side these animals are making a sound, that is, we can accurately estimate the location of the ultrasound emission," says Valley Pokie, a professor at Alto University. In this way, a person can become super-hearing.
Earlier, many instruments were made to hear the sound of bats or to know their direction, but they did not succeed. In the process, experts created a line of sensitive microphones on a red pop-like round object. Now the ultrasound sound received was immediately converted to audible free frequencies. And that voice was sent to the headphones at that very moment. The computer is currently working on pitch shifting or changing the free frequency of sound, but next time the whole system will probably be integrated into the headphones.

The microphone then examined everything and pointed out the most important direction from which the sound was coming. In this way, not only the ultrasound sound of the flying mammal was heard but also its direction was known. But there are many benefits to this invention. It can detect leakage in pipes and electrical system malfunctions, which are usually emitted in the form of ultrasound.

Share the Love


Source
You Might Also Like
Comments By User
Add Your Comment
Your comment must be minimum 30 and maximum 200 charachters.
Your comment must be held for moderation.
If you are adding link in comment, Kindly add below link into your Blog/Website and add Verification Link. Else link will be removed from comment.