https://www.rayznewstv.com/

Share the Love


ماسکو: برف میں ہزاروں سال سے دبا خردبینی جرثومہ نہ صرف پھر سے زندہ ہوگیا بلکہ اپنی نسل بھی بڑھانے لگا ہے، اس کاوش سے ہم طب و سائنس کے مطابق بہت کچھ سمجھ سکتے ہیں۔

جیسے ہی سائنس دانوں نے مستقل برف (پرمافروسٹ) میں دبے اس کثیرخلوی لیکن خردبینی جان دار کو برف سے الگ کیا تو وہ زندہ ہوگیا اور نسل بڑھانے لگا۔ اس سے ہم برف میں خلوی تباہ کاری سے بچنے کی نئی راہ تلاش کرسکتے ہیں اور اس سے ہم انسان بھی استفادہ کرسکتے ہیں۔


روس میں فزیوکیمیکل اینڈ بائیلوجی پرابلمز کے سائنس دانوں نے یہ تحقیق پیش کی ہے۔ اس ادارے سے وابستہ حیاتیات داں اسٹاس مالاوِن کہتے ہیں کہ ہماری تحقیق مشکل سے ملنے والا ثبوت پیش کرتی ہے کہ کس طرح کثیرخلوی جاندار سیکڑوں ہزاروں سال برف میں موت جیسی خوابیدگی کے باوجود زندہ رہتے ہیں اور ان میں استحالے (میٹابولزم) کا پورا نظام بھی شروع ہوجاتا ہے۔
اس جاندار کا نام ’روٹیفائر‘ ہے جو پوری دنیا کے تالاب اور جوہڑوں میں عام پائے جاتے ہیں۔ اگرچہ ان کی یہ خاصیت سامنے آچکی تھی لیکن ہزاروں برس تک ان کے زندہ رہنے کے ثبوت پہلی مرتبہ ملے ہیں۔ زیرِ تجربہ جان دار آرکٹک پرمافراسٹ سے ملا ہے جہاں پہلے ہی قدیم خرد نامiے مل چکے ہیں، جن میں وائرس، پودے اور زردانے بھی شامل ہیں۔

جس جگہ سے یہ روٹیفائر ملا ہے وہاں ریڈیو کاربن ڈیٹنگ سے معلوم ہوا ہے کہ یہ جانور کم سے کم 24 ہزار سال قدیم ہے۔ زندہ ہونے کے بعد اس جانور نے غیرجنسی کلوننگ سے اپنی نسل بھی بڑھانی شروع کردی جسے ’پارتھینوجنیسس‘ کہا جاتا ہے۔

 

MOSCOW: The microscopic microbe that has been buried in the ice for thousands of years has not only resurfaced but is also beginning to reproduce. With this effort, we can understand a lot according to medicine and science.

As scientists isolated this multicellular but microscopic creature buried in permanent ice (permafrost) from ice, it came to life and began to reproduce. It allows us to find new ways to avoid cell destruction in ice, and it can benefit us humans.


Scientists from Physiochemical and Biological Problems in Russia have presented this research. "Our research provides hard-to-find evidence of how multicellular organisms survive hundreds of thousands of years of sleep-like sleep in the ice, as well as their entire metabolism system," said Stas Malvin, a biologist at the institute. Begins.
The creature's name is Rotifier, which is common in ponds and lakes around the world. Although this trait was discovered, evidence of their survival for thousands of years has been found for the first time. The experiments were performed on living Arctic permafrost, where ancient microorganisms have already been found, including viruses, plants and apricots.

Radiocarbon dating at the site of the rotifier has revealed that the animal is at least 24,000 years old. After surviving, the animal also began to reproduce through asexual cloning, which is called 'parthenogenesis'.

Share the Love


Source
You Might Also Like
Comments By User
Add Your Comment
Your comment must be minimum 30 and maximum 200 charachters.
Your comment must be held for moderation.
If you are adding link in comment, Kindly add below link into your Blog/Website and add Verification Link. Else link will be removed from comment.