https://www.rayznewstv.com/

Share the Love


لاہور: وزیر ریلوے اعظم خان سواتی نے اعتراف کیا ہے کہ ڈہرکی کے قریب حادثے کا شکار ہونے والی ملت ایکسپریس جب کراچی سے چلی تو اس کی بوگیاں ہل رہی تھیں۔ 

لاہور میں پریس کانفرنس کے دوران اعظم سواتی نے کہا کہ ڈہرکی ٹرین حادثہ معمولی نہیں تھا، ٹرین کی 12 بوگیاں ڈی ریل ہوئیں جو حادثے کی وجہ بنی ، ریسکیو آپریشن مکمل ہونے تک جائے حادثہ پر موجود رہا، واقعے میں 63 افراد جاں بحق جب کہ 107 زخمی ہوئے، 20 زخمی اس وقت اسپتالوں میں زیر علاج ہیں جن میں سے 3 کی حالت تشویش ناک ہے۔ انسانی جان کا کوئی نعم البدل نہیں لیکن مروجہ قانون کے تحت جاں بحق افراد کے لواحقین کو 15 لاکھ روپے جب کہ زخمیوں کی حالت کو دیکھتے ہوئے 50 ہزار سے 3 لاکھ روپے تک معاوضہ دیا جاتا ہے۔

 
اعظم سواتی نے کہا کہ ملت ٹرین جب کراچی سے چلی تو بوگیاں ہل رہی تھیں، کوچ نمبر 10 میں بفر نہیں تھے  جب کہ بولٹ بھی ٹوٹے ہوئے تھے۔  ملت ایکسپریس کی بوگیاں دوسرے ٹریک پر آگئیں، اسی دوران دوسری ٹرین بوگیوں سے ٹکرا گئیں، ٹرین کی 12 بوگیاں ڈی ریل ہوئیں جو حادثے کی وجہ بنی ، جب حادثہ ہوا تو جانیں بچانے کا بھی موقع نہیں ملا ۔ ریلیف ٹرین 2 گھنٹے تاخیرسے  پہنچی۔
اعظم سواتی نے کہا کہ 2014 سے آج تک ریلوے ٹریک پر کوئی خرچہ نہیں ہوا، ریلوے ٹریکس کی صرف مرمت ہوئی ہے، ابتدائی رپورٹ کے مطابق جس جگہ حادثہ ہوا ہے وہاں 8 میل کے ٹریک کی مرمت کی تھی، اس لئے اس بات کا امکان انتہائی کم ہے کہ واقعہ ٹریک کی خرابی کے باعث پیش آیا۔ سکھر کا ٹریک خطرناک ہے ، اس لئے کئی مقامات پر ٹرین کی رفتار کی حد مقرر کی ہے، ہمیں ہرصورت ریلوے کا نظام بہتر کرنا ہوگا، ریلوے کے پاس چالیس پچاس سال پرانی کوچز ہیں، ہمیں کوچز اور انجنوں کی تبدیلی کی ضرورت نہیں لیکن ہرصورت میں پورے ریلوے ٹریک کو اپ گریڈ کرنا ہے۔ ریلوے کی اپ گریڈیشن کے لئے 620 ارب روپے چاہئیں، اتوار یا پیر کو وزیر اعظم سے ملاقات کروں گا۔ اگر اس حادثہ کا متبادل میرا استعفیٰ ہے تو بسم اللہ میں اس کے لئے تیار ہوں۔

 
وزیر ریلوے کا کہنا تھا کہ گزشتہ ہفتے چینی سفیر سے ایم ایل ون کے حوالے سے ڈیڑھ گھنٹے طویل میٹنگ ہوئی، چینی سفیر کو ایم ایل ون پر مختلف تجاویز دی ہیں، چینی سفیر سے کہا کہ ہم نے ایم ایل ون پر آپ کی شرائط تسلیم کرلی ہیں، چینی حکام کو باور کرایا کہ فیز ون میں انسانی جانوں کے ضیاع کا خدشہ ہے۔

 

LAHORE: Railway Minister Azam Khan Swati has admitted that the bogies of the Millat Express, which was involved in an accident near Daharki, were shaking when it left Karachi.

During a press conference in Lahore, Azam Swati said that the Daharki train accident was not a minor one. 12 bogies of the train derailed which caused the accident. Rescue operations remained at the spot till the completion of the accident. 63 people were killed in the incident. 107 injured, 20 injured are currently undergoing treatment in hospitals, out of which 3 are in critical condition. There is no substitute for human life but under the prevailing law, the relatives of the deceased are paid Rs 1.5 million while the injured are given compensation of Rs 50,000 to Rs 300,000 depending on the condition.

 
Azam Swati said that when the Millat train left Karachi, the bogies were shaking, there was no buffer in coach No. 10 and the bolts were also broken. The bogies of Millat Express came on the second track, meanwhile the other train collided with the bogies, 12 bogies of the train were derailed which caused the accident, when the accident took place there was no chance to save lives. The relief train arrived 2 hours late.
Azam Swati said that no expenditure has been incurred on the railway track from 2014 to date, only the railway tracks have been repaired, according to the initial report, 8 miles of track had been repaired at the place where the accident took place, so it is likely. It is very rare that the incident occurred due to a track malfunction. Sukkur track is dangerous, so train speed limit has been set in many places, we have to improve the railway system anyway, the railways have forty or fifty years old coaches, we do not need to change coaches and locomotives but anyway I have to upgrade the whole railway track. Rs 620 billion is needed for the upgradation of railways. I will meet the Prime Minister on Sunday or Monday. If the alternative to this accident is my resignation, then in Bismillah I am ready for it.

 
The Railway Minister said that an hour and a half long meeting was held with the Chinese Ambassador regarding ML-1 last week. The Chinese Ambassador was given various suggestions on ML-1. He told the Chinese Ambassador that we have accepted your terms on ML-1. Curley assured Chinese officials that there was a risk of loss of life in Phase-I.

Share the Love


Source
You Might Also Like
Comments By User
Add Your Comment
Your comment must be minimum 30 and maximum 200 charachters.
Your comment must be held for moderation.
If you are adding link in comment, Kindly add below link into your Blog/Website and add Verification Link. Else link will be removed from comment.