https://www.rayznewstv.com/

Share the Love


اسلام آباد: اپوزیشن کی سائیڈ لینے پر حکومتی ارکان نالاں جب کہ اپوزیشن وفاقی وزراء کے خلاف کارروائی نہ کرنے پر برہم ہے۔

ایکسپریس نیوز کے مطابق قومی اسمبلی کا اجلاس آج پھر ہنگامہ خیز ہونے کا امکان ہے، اور موجودہ صورتحال نے اسپیکر قومی اسمبلی اسد قیصر کے لئے مشکل پیدا کردی ہے۔

ذرائع کا کہنا ہے کہ گزشتہ روز اسپیکر قومی اسمبلی نے گزشتہ اجلاس میں نازیبا زبان استعمال کرنے والے اراکین پارلیمنٹ پر اجلاس میں شرکت پر پابندی عائد کی تھی، جس کے بعد اپوزیشن کی سائیڈ لینے پر حکومتی ارکان نالاں ہیں اور وفاقی وزراء کے خلاف کارروائی نہ کرنے پر اپوزیشن برہم ہے۔
گزشتہ روز معاملات کو درست سمت کی جانب لے جانے کے لئے حکومت کی طرف سے ایک کمیٹی تشکیل دی گئی تھی، جس کو اپوزیشن سے مذاکرات کرنے اور اسمبلی میں تعاون کے لئے تیار کرنے کا ہدف دیا گیا تھا، تاہم ذرائع کا کہنا ہے کہ حکومت اور اپوزیشن میں رسمی مذاکرات بھی نہ ہونے کا امکان ہے، اور اپوزیشن کی طرف سے تاحال مذاکرات کی پیش کش کو قبول نہیں کیا گیا، جس کی بڑی وجہ خود اپوزیشن میں دو دھڑے بن جانا ہے۔

اپوزیشن کے ایک دھڑے کے رہنما چار سے زائد وفاقی وزراء کے خلاف سپیکر کی جانب سے کارروائی کی منتظر ہیں اور ان کا کہنا ہے کہ حکومت کے ساتھ کسی قسم کے مذاکرات نہ کئے جائیں، جو بھی مذاکرات ہوں گے پارلیمان کے اندر ہوں گے، حکومت بجٹ کے تین دن ضائع کرنے کے بعد کس منہ سے مذاکرات کی بات کر رہی ہے، حکومت کو پارلیمنٹ کے اندر اجلاس کے دوران اپنے رویہ پر معذرت کرنا ہوگی۔

اپوزیشن کے دوسرے دھڑے کا مؤقف ہے کہ اگر مذاکراتی کمیٹی بااختیار ہے تو پھر مذاکرات کئے جائیں تاکہ حل نکلے، جمہوریت کی خاطر اور نظام کو بچانے کے لئے مذاکرات کے دروازے بند نہیں ہونے چاہیئے۔

ذرائع نے بتایا ہے کہ موجودہ کشیدہ صورتحال کے پیش نظر حکومت نے قومی اسمبلی کے اجلاس سے قبل ایک مشارورتی اجلاس رکھا ہے، پارلیمانی پارٹی اجلاس کی صدارت خود وزیراعظم عمران خان کریں گے، جس میں حکومت ڈپٹی اسپیکر کے خلاف اپوزیشن کی تحریک عدم اعتماد  کے حوالے سے حکمت عملی مرتب کرے گی، اور اسپیکر قومی اسمبلی کے خلاف اپوزیشن کی متوقع تحریک عدم اعتماد پر بھی تبادلہ خیال کیا جائے گا۔ ذرائع کے مطابق حکومتی پارلیمانی پارٹی اجلاس میں اسپیکر قومی اسمبلی پر پی ٹی آئی ارکان کی جانب سے اعتراضات کا بھی امکان ہے۔

 

ISLAMABAD: Government members are angry over taking the side of the opposition while the opposition is angry over not taking action against the federal ministers.

According to Express News, the National Assembly session is likely to be tumultuous again today, and the current situation has created difficulties for National Assembly Speaker Asad Qaiser.

Sources said that yesterday, the Speaker of the National Assembly had banned the members of parliament who used vulgar language in the last session from attending the session, after which the government members are angry over taking the side of the opposition and no action has been taken against the federal ministers. The opposition is furious.
A committee was set up by the government yesterday to take matters in the right direction, with the aim of negotiating with the opposition and preparing it for co-operation in the assembly, but sources said the government And there is likely to be no formal talks in the opposition, and the offer of talks has not yet been accepted by the opposition, largely due to the fact that the opposition itself has become two factions.

Leaders of an opposition faction are awaiting action from the speaker against more than four federal ministers and say no talks should be held with the government, whatever the talks will be inside parliament, the government said. After wasting three days of the budget, the government will have to apologize for its attitude during the session inside the parliament.

The other faction of the opposition is of the view that if the negotiating committee is empowered, then negotiations should be held to find a solution, for the sake of democracy and to save the system, the doors of negotiations should not be closed.

Sources said that in view of the current tense situation, the government has convened a consultative meeting before the National Assembly session. The parliamentary party meeting will be chaired by Prime Minister Imran Khan himself, in which the government will file a no-confidence motion against the deputy speaker. The strategy will be formulated in this regard, and the expected no-confidence motion of the opposition against the Speaker of the National Assembly will also be discussed. According to sources, there is a possibility of objections from PTI members on the Speaker National Assembly in the ruling parliamentary party meeting.

Share the Love


Source
You Might Also Like
Comments By User
Add Your Comment
Your comment must be minimum 30 and maximum 200 charachters.
Your comment must be held for moderation.
If you are adding link in comment, Kindly add below link into your Blog/Website and add Verification Link. Else link will be removed from comment.