https://www.rayznewstv.com/

Share the Love


لاہور ہائیکورٹ نے 91 سال پرانا زمین کے تنازع کا فیصلہ سنادیا۔

عدالت نے نامو بی بی کی 119 کنال 11 مرلے کی زمین پر سول کورٹ کا فیصلہ کالعدم قرار دینے کی درخواست مسترد کردی۔

جسٹس ساجد محمود نے 8صفحات پر مشتمل تحریری فیصلہ سنایا کہ درخواست گزار کے مطابق وہ 1946سے1960 تک زمین پر قابض رہے، یہ بات طے ہے کہ قبضہ چاہے کتنا ہی لمبا ہو وہ اصل مالک کے حقوق ختم نہیں کرسکتا، درخواست گزار کے مطابق انہوں نے زمین 14 ہزارروپے کے عوض خریدی، لیکن وہ اس ٹرانزیکشن کی تاریخ ،وقت اور سیل ایگریمنٹ دیکھانے میں ناکام رہے، انہوں نے سیل ایگریمنٹ کی خلاف وزری پر کوئی قانونی فورم استعمال نہیں کیا۔
فیصلے میں کہا گیا کہ کلیکٹر بہاولپور نے مارچ 1961 میں درخواست گزار کے خلاف فیصلہ سنایا اور اسے غیر قانونی قابض قرار دیا، ٹرائل کورٹ نے 2011 میں گواہوں کے بیانات قلمبند کرنے کے بعد فیصلہ سنایا، سیشن کورٹ نے بھی درخواست گزار کے خلاف 2015 میں فیصلہ سنایا، درخواست گزار نے ایڈیشنل سیشن جج کے حکم کو ہائیکورٹ میں چیلنج کیا تھا۔

فیصلے میں مزید کہا گیا کہ فریق نمبر گیارہ بطور اے ڈی سی آر بہاولپور میں 1980 میں تعینات تھے، انہوں نے فیصلے میں قرار دیا کہ درخواست گزار مالک ہونے کا کوئی قانونی نکتہ پیش کرنے میں ناکام رہا، اس نے بطور ثبوت جو اسٹام پیپر فراہم کیا اسکا ریکارڈ موجود نہیں، درخواست گزار غیر قانونی قبضہ اور مالکانہ حقوق حاصل کرنا چاہتا ہے، اس نے غیرقانونی طور پر اختیارات سے تجاوز کیا، عدالت اس کی درخواست کو فوری مسترد کرتی ہے۔

Lahore High Court rules 91-year-old land dispute

The court rejected the petition of Namo Bibi to quash the decision of the civil court on 119 kanal 11 marla land.

Justice Sajid Mehmood delivered an 8-page written judgment stating that according to the petitioner, he occupied the land from 1946 to 1960. It is a fact that no matter how long the occupation, he could not terminate the rights of the original owner. Bought for Rs. 14,000, but failed to show the date, time and sale agreement of the transaction. He did not use any legal forum against the Minister against the sale agreement.
The judgment said that the Collector of Bahawalpur had ruled against the petitioner in March 1961 and declared it illegal possession. The trial court ruled in 2011 after recording the statements of witnesses. The Sessions Court also ruled against the petitioner in 2015. Ruling, the petitioner had challenged the order of the Additional Sessions Judge in the High Court.

The judgment further stated that party number eleven was posted as ADCR in Bahawalpur in 1980, stating in the judgment that the petitioner failed to present any legal point of ownership, citing the stamp paper as evidence. Doesn't his record exist, the petitioner wants illegal possession and ownership rights, he has illegally exceeded his powers, the court immediately rejects his application.

Share the Love


Source
You Might Also Like
Comments By User
Add Your Comment
Your comment must be minimum 30 and maximum 200 charachters.
Your comment must be held for moderation.
If you are adding link in comment, Kindly add below link into your Blog/Website and add Verification Link. Else link will be removed from comment.