https://www.rayznewstv.com/

Share the Love


دبئی سٹی: متحدہ عرب امارات اور دبئی کے کئی علاقے اب بھی دنیا بھر میں کم ترین بارش برساتے ہیں۔ اب یہاں چھوٹے طیاروں سے بادلوں کو چارج کرکے بارش برسانے پر تجربات جاری ہیں۔

ان جہازوں کو کسی مجنیق یا غلیل جیسے نظام سے ہوا میں پھینکا جائے گا جو بادلوں میں جاکر بجلی چھوڑیں گے۔ اس طرح بادلوں میں موجود بارشوں کے چھوٹے بڑے قطرے چارج ہوجائیں گے اورشاید اس طرح وہ زمین کا رخ کرسکتے ہیں۔

 
اگرچہ متحدہ عرب امارات میں 2017 سے اس کے تجربات جاری ہیں لیکن اب کینٹ یونیورسٹی کے سائنسداں اس پر غور کررہے ہیں۔ جامعہ سے وابستہ پروفیسر کیری نکول کہتی ہیں کہ اگرچہ بادلوں میں بجلی پہنچا کر بارش برسانے پر برسوں سے غور ہورہا ہے لیکن اس دعوے کے بارے میں مزید تحقیق کی ضرورت ہے۔
امارات کے قومی ادارہ برائے موسمیات نے اس تحقیقی پروگرام کے لیے 15 لاکھ ڈالر کی رقم مختص کی ہے جو تین برس تک جاری رہے گی۔ اولین تجربات کے لیے چار طیارے بنائے گئے جن میں سے ہر ایک کے بازو کی لمبائی دو میٹر ہے۔ یہ خودکار انداز یعنی آٹوپائلٹ کے تحت پرواز کرتے ہیں اور انہیں ایک منجنیق نما نظام سے دھکیلا جاتا ہے۔

کئی اقسام کے سینسر سے مرصع ایک طیارہ چالیس منٹ تک فضا میں پرواز کرسکتا ہے۔ اپنے جدید نظام کی بدولت یہ درجہ حرارت، ہوا کے دباؤ، بادلوں کے چارج اور نمی کو نوٹ کرتا رہتا ہے۔ لیکن اس کا سب سے اہم کام بادلوں میں کرنٹ دوڑانا ہے تاکہ وہ چارج سے بھرجائیں اورکسی طرح برسات شروع ہوجائے۔

اس سے قبل فن لینڈ اور برطانیہ میں بھی ان طیاروں کی آزمائش ہوچکی ہے جبکہ زمین پر رہتے ہوئے بادلوں پر تحقیق یو اے ای میں کی گئی ہے۔ اس کی تفصیلات ایک تحقیقی جریدے، دی جرنل آف ایٹماسفیئرک اینڈ اوشیانِک ٹیکنالوجی میں بھی شائع ہوئی ہے۔

اس ضمن میں اولین تجربات موسمِ گرما کے عروج میں ہوں گے جس کا انتظار کیا جارہا ہے۔

 

Dubai City: The United Arab Emirates and many parts of Dubai still receive the least rainfall in the world. Experiments are now underway to charge clouds with small planes and send rain.

These planes will be thrown into the air by a system like a catapult or slingshot that will go into the clouds and release electricity. In this way, the small and big raindrops in the clouds will be charged and maybe in this way they can turn towards the earth.

 
Although experiments have been underway in the UAE since 2017, scientists at the University of Kent are now considering it. Professor Kerry Nicole of the university says that although it has been considered for years to send rain with electricity to the clouds, more research is needed on this claim.
The UAE National Meteorological Agency has allocated 15 1.5 million for the research program, which will run for three years. For the first experiments, four planes were built, each with an arm length of two meters. They fly in autopilot mode and are propelled by a catapult-like system.

With a variety of sensors, a minimalist plane can fly in the air for up to 40 minutes. Thanks to its state-of-the-art system, it keeps track of temperature, air pressure, cloud charge and humidity. But the most important thing is to run current in the clouds so that they are filled with charge and somehow it starts raining.

The planes have previously been tested in Finland and the United Kingdom, while on-the-ground clouds have been studied in the UAE. Details are also published in the research journal, The Journal of Atmospheric and Oceanic Technology.

The long-awaited first experiences in this regard will be at the height of summer.

Share the Love


Source
You Might Also Like
Comments By User
Add Your Comment
Your comment must be minimum 30 and maximum 200 charachters.
Your comment must be held for moderation.
If you are adding link in comment, Kindly add below link into your Blog/Website and add Verification Link. Else link will be removed from comment.