https://www.rayznewstv.com/

Share the Love


فن لینڈ: ورزش کی ایک قسم اسپرنٹ اور بلند شدت والی کسرت ہے جس میں کچھ دیر کے لیے یہ سخت ورزشیں کرائی جاتی ہیں۔ اب معلوم ہوا کہ ہے اگر آپ درمیانی عمر (40 سے 55سال) کی عمر کے ہیں تو یہ ورزش ہڈیوں کے حیاتیاتی بڑھاپے کو سست کرسکتی ہیں۔

بالخصوص مردوں میں عمر کے ساتھ ساتھ ہڈیوں کی بریدگی اور ٹوٹ پھوٹ کو شدید ورزشوں سے دور کرنے میں مدد مل سکتی ہے۔ یونیورسٹی آف جے وائسکائیلا کے سائنسدانوں نے تیزرفتار دوڑ کے ران اور پنڈلی کی ہڈیوں پر اثرات کو نوٹ کیا ہے۔ اس تحقیق میں درمیانی عمر کے افراد کا دس برس تک جائزہ لیا گیا ہے۔

پہلی مرتبہ یہ بھی معلوم ہوا ہے کہ اس سے پورے انسانی ڈھانچے پر بھی اچھے اثرات مرتب ہوتے ہیں۔ اگر انسان جسمانی مشقت سے جی چراتا ہے تو ہماری ہڈیوں پر اس کے برے اثرات مرتب ہوتے ہیں۔ لیکن ورزش سے بہت فائدہ ہوتا ہے جن میں تیزرفتار اسپرنٹ دوڑ، رسی کودنا اور دیگر شدت والی ورزشیں سرِ فہرست ہیں۔ اس تحقیق میں 40 سے 85 سال کی عمر کے کئی افراد کو شامل کیا گیا تھا۔
ورزش کرنے اور نہ کرنے والے افراد کی ٹانگوں کی ہڈیوں کا دس سال تک کمپیوٹر ٹوموگرافی سے جائزہ لیا گیا تو معلوم ہوا کہ سخت ورزش ہڈیوں کی بریدگی اور متاثر ہونے کے عمل کو سست کرتی ہے۔ ماہرین نے اسی بنا پر مشورہ دیا ہے کہ عمر کے کسی بھی حصے میں کم مدت کی سخت ورزش ضرور جاری رکھی جائے۔

 

Finland: A type of exercise called sprint and high intensity exercise in which these strenuous exercises are done for a while. It is now known that if you are in middle age (40 to 55 years), this exercise can slow down the biological aging of bones.

In men in particular, with age, osteoporosis can help relieve bone fractures and fractures. Scientists at the University of J. Wisconsin have noted the effects of high-speed running on the thigh and shin bones. The study looked at middle-aged people for ten years.

For the first time, it has been shown to have a positive effect on the entire human body. If a person abstains from physical exertion, it has a bad effect on our bones. But there are many benefits to exercising, including high-speed sprinting, rope jumping, and other strenuous activities. The study included several people between the ages of 40 and 85.
The tomo bones of people who did and did not exercise were examined with computer tomography for ten years and it was found that strenuous exercise slowed down the process of bone attack and infection. For this reason, experts have suggested that short-term strenuous exercise must be continued at any age.

Share the Love


Source
You Might Also Like
Comments By User
Add Your Comment
Your comment must be minimum 30 and maximum 200 charachters.
Your comment must be held for moderation.
If you are adding link in comment, Kindly add below link into your Blog/Website and add Verification Link. Else link will be removed from comment.