https://www.rayznewstv.com/

Share the Love


ویلنگٹن: نیوزی لینڈ کی وزیراعظم جسنڈرا آرڈن کا کہنا ہے کہ کرائسٹ چرچ سانحہ پر بننے والی فلم کا مرکز نیوزی لینڈ میں مسلم برادری کو ہوناچاہیے نہ کہ میری شخصیت۔

رپورٹس کے مطابق 2019 میں نیوزی لینڈ کے شہر کرائسٹ چرچ میں مسجد پر ہونے والے حملے پر فلم بنانے کا اعلان کیا گیا جس کا نام ’They are us‘ رکھا گیا ہے، فلم میں نیوزی لینڈ کی وزیراعظم جسنڈرا آرڈن کے پرتشدد واقعہ کے خلاف فوری ردعمل کو نہ صرف سراہا گیا ہے بلکہ اس کو ایک متاثر کن کہانی کے طور پر بیان کیا جائے گا تاہم جسنڈرا آرڈن کو فلم میں اپنی تعریف بالکل بھی پسند نہیں آئی۔

 
وزیراعظم آفس کی جانب سے جاری ایک بیان میں کہا گیا ہے کہ حکومت کا اس فلم سے کوئی تعلق نہیں جب کہ ایک پریس کانفرنس میں جسنڈرا آرڈن نے کہا کہ کراسٹ چرچ واقعہ پر بننے والی فلم میری شخصیت کے بجائے مسلم برادری کے کردار پر مرکوز ہونی چاہیے، یہ واقعہ نہ صرف ملک کی تاریخ کے لیے برا تھا بلکہ اس سے بھی کہیں زیادہ اس برادری کے لیے تھا جو اس سے متاثر ہوئے۔
واضح رہے کہ 2 سال قبل نیوزی لینڈ کے شہرکرائسٹ چرچ کی 2 مساجد النوراورلینوڈ میں فوجی وردی میں ملبوس 28 سالہ انتہا پسند آسٹریلوی سفید فام برینٹن ٹیرنٹ کی فائرنگ سے 49 افراد جاں بحق اور 48 زخمی ہوگئے تھے۔

WELLINGTON: New Zealand Prime Minister Jacinda Arden says a film on the Christchurch tragedy should focus on the Muslim community in New Zealand, not me.

According to reports, a film titled 'They are us' has been announced to be made in 2019 on the attack on the mosque in Christchurch, New Zealand, in which the film is immediately against the violent incident of the Prime Minister of New Zealand Jasandra Arden. The response has not only been well-received, but has been hailed as an inspiring story, but Jacqueline Arden did not like the film at all.

 A statement from the Prime Minister's Office said, "The government has nothing to do with this film. In a press conference, Jacqueline Arden said that the film about the Christchurch incident should focus on the role of the Muslim community rather than my personality." Of course, this incident was not only bad for the history of the country but even more so for the community that was affected by it.
It should be noted that 2 years ago, 49 people were killed and 48 were injured when a 28-year-old extremist Australian white Brenton Trent, dressed in a military uniform, opened fire at two mosques in Christchurch, New Zealand.

Share the Love


Source
You Might Also Like
Comments By User
Add Your Comment
Your comment must be minimum 30 and maximum 200 charachters.
Your comment must be held for moderation.
If you are adding link in comment, Kindly add below link into your Blog/Website and add Verification Link. Else link will be removed from comment.