https://www.rayznewstv.com/

Share the Love


کراچی: وسیم خان محمد عامر کو ’’منانے‘‘ کی کوشش کرنے لگے جب کہ ’’ریٹائرڈ پیسر‘‘ کا کہنا ہے کہ مسائل حل ہوئے تو میں پاکستان کے لیے دستیاب ہوں گا۔

محمد عامر نے کچھ عرصے قبل ٹیم مینجمنٹ کے رویے کو جواز بنا کر قومی ٹیم کیلیے عدم دستیابی کا اعلان کر دیا تھا، ان کا کہنا تھا کہ موجودہ مینجمنٹ کے دور میں واپس نہیں آؤں گا، البتہ اب ان کا ارادہ تبدیل ہوتا نظر آ رہا ہے۔

سابق فرسٹ کلاس کرکٹر  طاہر خان کے یوٹیوب چینل کو انٹرویو میں انھوں نے کہا کہ ملک سے بڑھ کر کچھ نہیں ہوتا،اگر میرے مسائل حل ہوئے تو قومی ٹیم کا حصہ بننے کے لیے تیار ہوں۔
انھوں نے کہا کہ پی سی بی کے سی ای او وسیم خان 2 مرتبہ میرے گھر پر آئے، انھوں نے مجھے بہت عزت و تکریم دی، ماضی میں کبھی ایسا نہیں ہوا،میں نے ان کے روبرو اپنے مسائل رکھے، انھوں نے میری باتیں سننے کے بعد بھرپور معاونت کا اظہار کیا۔

محمدعامر نے مزید کہا کہ مسائل حل ہونگے تو میں بھی پاکستان کیلیے دستیاب ہوں، میں باربار اس پر بات کروں گا تو لوگ کہیں گے کہ یہ جان بوجھ کر ایسا کرتا ہے اور اپنی صفائیاں پیش کررہا ہے،ہمارا کلچر ایسا بن گیا ہے کہ لوگ ان باتوں کو منفی لیتے ہیں،اگر اپنی ذات سے متعلق از خود فیصلہ کر لیا جائے تو کہتے ہیں کہ یہ کیسے کرلیا،یہ تو ہم سے بڑھ کر ہو گیا،فیصلہ تو ہم کرینگے، ذاتی فیصلے پرلوگ پیچھے پڑجاتے ہیں۔

پیسر نے کہا کہ اس وقت پاکستان کرکٹ ٹیم کی مینجمنٹ میں موجود بعض افراد نے میرے فیصلے کی منفی عکاسی کی، اچھے کپتان کی یہی نشانی ہے کہ اسے اپنے کھلاڑی کی حوصلہ افزائی کرنی چاہیے۔

محمد عامر نے کہا کہ پاکستان میں پی ایس ایل کو کھلاڑی کے چناؤ کیلیے بنیادی حیثیت دیدی گئی جو قطعی طور پر غلط ہے، انھوں نے کہا کہ ملک سے بڑا کوئی نہیں ہے اور نہ ہوسکتا ہے۔

 

Karachi: Wasim Khan started trying to "persuade" Mohammad Aamir, while the "retired pacer" said that if the problems were resolved, he would be available for Pakistan.

Mohammad Aamir had recently announced his unavailability for the national team justifying the team management's behavior, saying that he would not return to the current management era, but now his intentions seem to be changing. Is.

In an interview to former first-class cricketer Tahir Khan's YouTube channel, he said that nothing happens beyond the country, if my problems are solved, I am ready to be a part of the national team.
He said that PCB CEO Wasim Khan came to my house twice, he gave me a lot of respect, it has never happened in the past, I put my problems before him, he listened to me. After that expressed full support.

Mohammad Aamir further said that if the problems are solved then I am also available for Pakistan. I will talk about it again and again and people will say that it does it on purpose and is offering its cleansing. Our culture has become such that people They take these things negatively, if they make a decision about themselves, they say how they did it, it is more than us, we will make the decision, people fall behind on personal decisions.

"Some people in the management of the Pakistan cricket team at the time negatively reflected my decision. It is a sign of a good captain that he should encourage his players," Pacer said.

Mohammad Aamir said that PSL was given the basic status for the selection of players in Pakistan which is absolutely wrong. He said that there is no one greater than the country and it cannot be.

Share the Love


Source
You Might Also Like
Comments By User
Add Your Comment
Your comment must be minimum 30 and maximum 200 charachters.
Your comment must be held for moderation.
If you are adding link in comment, Kindly add below link into your Blog/Website and add Verification Link. Else link will be removed from comment.