https://www.rayznewstv.com/

Share the Love


سنگاپور سٹی: طبی تاریخ میں پہلی مرتبہ خون کا ایک ٹیسٹ وضع کیا گیا ہے جو طبیبوں کو یہ بتاتا ہےکہ سرطان کے خلاف جاری علاج کتنا مؤثر ہے اور اس میں کیا کچھ ترمیم کی ضرورت ہے۔

ایک عرصے سے اس کی ضرورت محسوس کی جارہی تھی کہ کسی طرح کوئی ٹیسٹ یہ بتاسکے کہ سرطان کے علاج کا اثر ہورہا ہے یا نہیں؟ خوش قسمتی سے یہ نیا ٹیسٹ 24 گھنٹے میں نتیجہ ظاہرکرتا ہے جو نیشنل یونیورسٹی آف سنگاپور کے حیاتی طبعیات داں شاؤ ہوئلین اور ان کے ساتھیوں نے وضع کیا ہے۔

 
اس ٹیسٹ میں بالخصوص خون کے خلیات کے درمیانی جگہوں یا وقفوں کا جائزہ لیا جاتا ہے۔ اسی مناسبت سے ٹیسٹ کا نام ایکسٹرا سیلولر ویسیکل مانیٹرنگ آف اسمال مالیکیول آکیوپینسی اینڈ پروٹین ایکسپریشن ExoSCOPE کا نام دیا گیا ہے۔ خلیات کے باہرچھوٹے جوف یا خلا کو ایکسٹرا ویسیکلز یا ای وی کہا جاتا ہے۔ درحیقیقت یہ خلیات سے خارج ہونے والے باریک ذرات ہوتے ہیں۔ اگرکوئی دوا سرطانی پھوڑے تک گئی ہے تو وہ سرطانی خلیات (کینسرسیلز) سے خارج ہوکر تھوڑی بہت باہر نکلے گی اور ای وی میں بھی پہنچے گی۔ اس سے ماہرین کو معلوم ہوجاتا ہے کہ دوا اپنے درست مقام تک پہنچ رہی ہے۔
اس سے قبل ماہرین دوا کی تاثیرمعلوم کرنے کے لیے تصویر کشی اور دیگر طریقے استعمال کرتے تھے لیکن اس کا نتیجہ ہفتوں بعد ہی برآمد ہوتا تھا۔ اس کے مقابلے میں  ایگزاسکوپ خون کا ٹیسٹ صرف 24 گھنٹے میں اپنا نتیجہ فراہم کرتا ہے۔ اس طرح کینسر کے علاج کا خرچ اور دورانیہ کم کرنے میں مدد مل سکتی ہے۔

واضح رہے کہ انسانی خون کے خلیات میں پائے جانے والے ای وی انسانی بال سے بھی سینکڑوں گنا باریک ہوتے ہیں۔ یہی وجہ ہے کہ اسے بھانپنے کے لیے خاص سینسر بنایا گیا ہے۔ اس سینسر میں کروڑوں نینو چھلے ہیں جو خون میں دوا کی مقدار کو کسی محدب عدسے کی طرح بڑھا کرکے دکھاتے ہیں۔

اس طرح خون کے اس ٹیسٹ کو انقلابی قرار دیا جارہا ہے کیونکہ یہ فوری طور پر کینسر تھراپی کے اثر کو ظاہر کرتا ہے۔

 

SINGAPORE: For the first time in medical history, a blood test has been developed to tell doctors how effective the ongoing treatment against cancer is and what modifications are needed.

For a long time, there was a need for a test to tell if the cancer treatment was working. Fortunately, this new test results in 24 hours, developed by Shao Huelin, a biophysicist at the National University of Singapore, and his colleagues.

 
This test specifically examines the spaces or intervals between blood cells. For this reason, the test has been named Extracellular Vehicle Monitoring of Small Molecular Occupancy and Protein Expression ExoSCOPE. The small cavity or space outside the cell is called the extravascular or EV. In fact, they are fine particles that come out of the cells. If a drug has reached the cancerous abscess, it will leak out of the cancer cells a little and reach the EV. This lets the experts know that the medicine is reaching its right place.
Earlier, experts used imaging and other methods to determine the effectiveness of the drug, but the results came weeks later. In contrast, the Exoscope blood test provides results in just 24 hours. This can help reduce the cost and duration of cancer treatment.

It should be noted that EVs found in human blood cells are hundreds of times thinner than human hair. That is why special sensors have been made to detect it. This sensor has millions of nano-rings that magnify the amount of medicine in the blood like a convex lens.

Thus, this blood test is being called revolutionary because it shows the immediate effect of cancer therapy.

Share the Love


Source
You Might Also Like
Comments By User
Add Your Comment
Your comment must be minimum 30 and maximum 200 charachters.
Your comment must be held for moderation.
If you are adding link in comment, Kindly add below link into your Blog/Website and add Verification Link. Else link will be removed from comment.